RHUS TOX

رسٹاکس-RHUS TOX

رسٹاکس-RHUS TOX

پورانامRustoxicodendron
*بچھوبوٹی نام کے ایک جنگلی پودے کے پتوں سے تیار کی جاتی ہے
*جس کے ظاہر سے نہایت خطرناک قسم کی خارش شروع ہو جاتی ہے۔شدید بخار،بھوک ختم ہو جاتی،متلی اور سخت سردرد ،غدود سوج جاتے ہیں۔
*سب سے اہم علامت جلن اورسوزش ہے جس کے نتیجے میں چھالے بنتے ہیں۔
*جلن جانے والے مریض کو غیر معمولی فائدہ دیتی ہے۔اونچی طاقت میں
*فالجی اثرات کے لیے مفید دوائی دائیں طرف کے اعضاء پر حملہ آور ہو رسٹاکس اور سلفر
*اعصابی دردوں میں جن میں آرام کرنے سے تکالیف بڑھے
* رسٹاکس کا مریض آرام سے لیٹ نہ سکے پہلو پہ پہلو بدلتا رہتا ہے
* حرکت سے مریض کو آرام ملتا ہے
* پہلی حرکت پر درد بڑھ جاتا لیکن جسم گرم ہو جاۓ تو دردوں میں افاقہ آجاتا ہے۔
*سرد اور مرطوب موسم میں رسٹاکس کی تمام علامات تیز ہو جاتی گرمی سے اور گرم خشک ہوا یا موسم میں آرام رہتا ہے
*بوجھ اٹھانے پر زور لگ جانا رسٹاکس بہت ہی مفید طلب ہے نیز کمر درد کو سخت چیز پر مثلاََ فرش پر لیٹنے سے آرام
*زیادہ بوجھ اٹھانے کی وجہ سے رحم میں نیچے گرنے کا رجحان رسٹاکس بہتر دوا۔لیکن رحم تک اثر رحم تک محدود نہیں۔ہر عضلہ جسے زیادہ بوجھ اٹھانے سے نقصان پہنچا ہو اس میں رسٹاکس اور ملی فولیم بہترین
*رسٹاکس کے ایگزیما میں پانی بہت بہتا ہے
* رسٹاکس کا مرطوب موسم سے گہرا تعلق ہے۔برسات میں جبکہ گرمی بھی ہو اس کی تکالیف بہت بڑھ جاتی ہیں۔
*رسٹاکس ملیریا کے بخار میں اچھا کام کرتی ہے اگر علامات کے آغاز میں اسے برائیونیا کے ساتھ ادل بدل کر دیا جائے اور حفظ ماتقدم آرنیکا اونچی طاقت میں دی جائے۔
*ملیریا کے علاوہ وہ بخار جو کھبی کم ہو کھبی زیادہ ہو نیز بے چینی،کپکپاہٹ،اور زبان خشک رہتی ہے مریض سردی محسوس کرتا اور نڈھال رہتا۔زبان میلی مگر نوک مثلث نما سرخ رسٹاکس کی خاص علامت ہے۔متواتر بے آرامی
*رسٹاکس ٹائیفائیڈ میں بھی کارآمد بخار سر کو چڑھتا ہے،پیٹ میں گڑ گڑاہٹ پیدا ہوتیااور تناؤ،ڈکار باہر نہ آتا نہ، نیچے اترتا دونوں راستے تنگ اور سکڑ جاتے،
*رسٹاکس کی آ آنکھوں کی انفیکشن میں بھی مفید ہے جبکہ آنکھوں میں سرخی ہواور پیپ پڑ جائے خاص طور پر مرطوب موسم میں تکالیف زیادہ ہوں

اپنا تبصرہ بھیجیں