ککڑی کھانے کا ذائقے دار خیال

ککڑی کھانے کا ذائقے دار خیال

عربی قثاء
فارسی خیارزہ
سندھی پابی یا ونگی
انگریزی Yellow Cucumber

اس کا رنگ سبز اور پھول زردی مائل ہوتے ہیں۔ اس کا ذائقہ پھیکا اور مزاج سرد تر دوسرے درجے میں ہوتا ہے۔ اس کی مقدار خوراک بیج ایک تولہ تک اور ویسے آدھ پاؤ روزانہ ہے۔ اس کے حسب ذیل فوائد ہیں۔

٭ ککڑی کے فوائد

(1) یہ حدت خون کو کم کرتی ہے۔
(2) جگر کو تسکین دیتی ہے۔
(3) ککڑی کے بیجوں کو پیشاب آور ہونے کی وجہ سے سوزاک، گردہ اور مثانہ کی پتھری دور کرنے کے لئے استعمال کرنا مفید ہوتا ہے۔
(4) اس کے بیجوں کو رگڑ کر چہرے پر لیپ کرنے سے چہرے کا رنگ نکھرتا ہے۔
(5) ککڑی کو کھانے کے لئے بہتر ہے کہ اس پر نمک اور کالی مرچ لگا کر کھایا جائے۔
(6) گرمی اور سوزش کو دور کرتی ہے۔
(7) ککڑی کھا کر پانی نہیں پینا چاہیئے ورنہ ہیضہ کا خدشہ ہو جاتا ہے۔
(8) یہ اپھار پیدا کرتی ہے۔
(9) دیر ہضم ہوتی ہے۔
(10) کولہوں اور کمر کے درد کے لئے انتہائی مفید ہے۔
(11) پرانے بخاروں کو ختم کرتی ہے۔
(12) ککڑی کے بیج ایک تولہ رگڑ کر روزانہ مسلسل پانچ روز تک پینے سے رگوں کو مواد سے پاک کرتے ہیں۔
(13) سوزاک کو دور کرنے کے لئے تخم خیارین چھ ماشے ، تخم خربوزہ چھ ماشے ، تخم کاسنی چھ ماشے رگڑ کر پلانا انتہائی مفید اور مجرب ہے۔
(14) اس کے زیادہ استعمال سے ریاح اور قولنج پیدا ہوتے ہیں۔
(15) حضور صلی اللہ علیہ وسلم کو ککڑی سے خاص رغبت تھی۔ حضرت عبد اللہ بن جعفر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم پکی ہوئی کھجوریں (رطب ) اور ککڑی (قثاء ) ایک ساتھ تناول فرماتے تھے۔
(16) پیشاب آور ہونے کے ناطے دل کی جملہ امراض میں ککڑی کا استعمال انتہائی مفید ہوتا ہے۔
(17) ککڑی کو خوب چبا کر کھانا چاہیے تاکہ وہ جلدی ہضم ہو جائے۔
(18) ککڑی کے پتے باؤلے کتے کے کاٹے کو پلانا بے حد مفید ہوتا ہے۔
(19) صفراوی دستوں میں ککڑی کے پتوں کو پانی میں رگڑ کر پلانا مفید ہوتا ہے۔
(20) ککڑی بلغم دور کرتی ہے۔
(21) ککڑی بدن کو موٹا کرتی ہے۔
(22) سرد مزاج والوں کو ککڑی کھانے میں احتیاط سے کام لینا چاہیئے کیونکہ ان کے لئے نقصان دہ ہوتی ہے۔ انہیں چاہیئے کہ وہ نمک، اجوائن کالی مرچ اور سونف کے ہمراہ کھائیں۔
٭٭٭

اپنا تبصرہ بھیجیں